37 SAFFAT

  • 37:1

    قطار در قطار صف باندھنے والوں کی قسم

  • 37:2

    پھر اُن کی قسم جو ڈانٹنے پھٹکارنے والے ہیں

  • 37:3

    پھر اُن کی قسم جو کلام نصیحت سنانے والے ہیں

  • 37:4

    تمہارا معبود حقیقی بس ایک ہی ہے

  • 37:5

    وہ جو زمین اور آسمانوں کا اور تمام اُن چیزوں کا مالک ہے جو زمین و آسمان میں ہیں، اور سارے مشرقوں کا مالک

  • 37:6

    ہم نے آسمان دنیا کو تاروں کی زینت سے آراستہ کیا ہے

  • 37:7

    اور ہر شیطان سرکش سے اس کو محفوظ کر دیا ہے

  • 37:8

    یہ شیاطین ملاء اعلیٰ کی باتیں نہیں سن سکتے، ہر طرف سے مارے اور ہانکے جاتے ہیں

  • 37:9

    اور ان کے لیے پیہم عذاب ہے

  • 37:10

    تاہم اگر کوئی ان میں سے کچھ لے اڑے تو ایک تیز شعلہ اس کا پیچھا کرتا ہے

  • 37:11

    اب اِن سے پوچھو، اِن کی پیدائش زیادہ مشکل ہے یا اُن چیزوں کی جو ہم نے پیدا کر رکھی ہیں؟ اِن کو تو ہم نے لیس دار گارے سے پیدا کیا ہے

  • 37:12

    تم (اللہ کی قدرت کے کرشموں پر) حیران ہو اور یہ اس کا مذاق اڑا رہے ہیں

  • 37:13

    سمجھایا جاتا ہے تو سمجھ کر نہیں دیتے

  • 37:14

    کوئی نشانی دیکھتے ہیں تو اسے ٹھٹھوں میں اڑاتے ہیں

  • 37:15

    اور کہتے ہیں "یہ تو صریح جادو ہے

  • 37:16

    بھلا کہیں ایسا ہو سکتا ہے کہ جب ہم مر چکے ہوں اور مٹی بن جائیں اور ہڈیوں کا پنجر رہ جائیں اُس وقت ہم پھر زندہ کر کے اٹھا کھڑے کیے جائیں؟

  • 37:17

    اور کیا ہمارے اگلے وقتوں کے آبا و اجداد بھی اٹھائے جائیں گے؟"

  • 37:18

    اِن سے کہو ہاں، اور تم (خدا کے مقابلے میں) بے بس ہو

  • 37:19

    بس ایک ہی جھڑکی ہو گی اور یکایک یہ اپنی آنکھوں سے (وہ سب کچھ جس کی خبر دی جا رہی ہے) دیکھ رہے ہوں گے

  • 37:20

    اُس وقت یہ کہیں گے "ہائے ہماری کم بختی، یہ تو یوم الجزا ہے"

  • 37:21

    "یہ وہی فیصلے کا دن ہے جسے تم جھٹلایا کرتے تھے"

  • 37:22

    (حکم ہو گا) گھیر لاؤ سب ظالموں اور ان کے ساتھیوں اور اُن معبودوں کو جن کی وہ خدا کو چھوڑ کر بندگی کیا کرتے تھے

  • 37:23

    پھر ان سب کو جہنم کا راستہ دکھاؤ

  • 37:24

    اور ذرا اِنہیں ٹھیراؤ، اِن سے کچھ پوچھنا ہے

  • 37:25

    "کیا ہو گیا تمہیں، اب کیوں ایک دوسرے کی مدد نہیں کرتے؟

  • 37:26

    ارے، آج تو یہ اپنے آپ کو (اور ایک دوسرے کو) حوالے کیے دے رہے ہیں!"

  • 37:27

    اس کے بعد یہ ایک دوسرے کی طرف مڑیں گے اور باہم تکرار شروع کر دیں گے

  • 37:28

    (پیروی کرنے والے اپنے پیشواؤں سے) کہیں گے، "تم ہمارے پاس سیدھے رخ سے آتے تھے"

  • 37:29

    وہ جواب دیں گے، "نہیں بلکہ تم خود ایمان لانے والے نہ تھے

  • 37:30

    ہمارا تم پر کوئی زور نہ تھا، تم خود ہی سرکش لوگ تھے

  • 37:31

    آخرکار ہم اپنے رب کے اِس فرمان کے مستحق ہو گئے کہ ہم عذاب کا مزا چکھنے والے ہیں

  • 37:32

    سو ہم نے تم کو بہکا یا، ہم خود بہکے ہوئے تھے"

  • 37:33

    اِس طرح وہ سب اُس روز عذاب میں مشترک ہوں گے

  • 37:34

    ہم مجرموں کے ساتھ یہی کچھ کیا کرتے ہیں

  • 37:35

    یہ وہ لوگ تھے کہ جب ان سے کہا جاتا "اللہ کے سوا کوئی معبود بر حق نہیں ہے" تو یہ گھمنڈ میں آ جاتے تھے

  • 37:36

    اور کہتے تھے "کیا ہم ایک شاعر مجنون کی خاطر اپنے معبودوں کو چھوڑ دیں؟"

  • 37:37

    حالانکہ وہ حق لے کر آیا تھا اور اس نے رسولوں کی تصدیق کی تھی

  • 37:38

    (اب ان سے کہا جائے گا کہ) تم لازماً دردناک سزا کا مزا چکھنے والے ہو

  • 37:39

    اور تمہیں جو بدلہ بھی دیا جا رہا ہے اُنہی اعمال کا دیا جا رہا ہے جو تم کرتے رہے ہو

  • 37:40

    مگر اللہ کے چیدہ بندے (اس انجام بد سے) محفوظ ہوں گے

  • 37:41

    ان کے لیے جانا بوجھا رزق ہے

  • 37:42

    ہر طرح کی لذیذ چیزیں،

  • 37:43

    اور نعمت بھری جنتیں

  • 37:44

    جن میں وہ عزت کے ساتھ رکھے جائیں گے تختوں پر آمنے سامنے بیٹھیں گے

  • 37:45

    شراب کے چشموں سے ساغر بھر بھر کر ان کے درمیان پھرائے جائیں گے

  • 37:46

    چمکتی ہوئی شراب، جو پینے والوں کے لیے لذّت ہو گی

  • 37:47

    نہ ان کے جسم کو اس سے کوئی ضرر ہوگا اور نہ ان کی عقل اس سے خراب ہو گی

  • 37:48

    اور ان کے پاس نگاہیں بچانے والی، خوبصورت آنکھوں والی عورتیں ہوں گی

  • 37:49

    ایسی نازک جیسے انڈے کے چھلکے کے نیچے چھپی ہوئی جھلی

  • 37:50

    پھر وہ ایک دوسرے کی طرف متوجہ ہو کر حالات پوچھیں گے

  • 37:51

    ان میں سے ایک کہے گا، "دنیا میں میرا ایک ہم نشین تھا

  • 37:52

    جو مجھ سے کہا کرتا تھا، کیا تم بھی تصدیق کرنے والوں میں سے ہو؟

  • 37:53

    کیا واقعی جب ہم مر چکے ہوں گے اور مٹی ہو جائیں گے اور ہڈیوں کا پنجر بن کر رہ جائیں گے تو ہمیں جزا و سزا دی جائے گی؟

  • 37:54

    اب کیا آپ لوگ دیکھنا چاہتے ہیں کہ وہ صاحب اب کہاں ہیں؟"

  • 37:55

    یہ کہہ کر جونہی وہ جھکے گا تو جہنم کی گہرائی میں اس کو دیکھ لے گا

  • 37:56

    اور اس سے خطاب کر کے کہے گا "خدا کی قسم، تُو تو مجھے تباہ ہی کر دینے والا تھا

  • 37:57

    میرے رب کا فضل شامل حال نہ ہوتا تو آج میں بھی اُن لوگوں میں سے ہوتا جو پکڑے ہوئے آئے ہیں

  • 37:58

    اچھا تو کیا اب ہم مرنے والے نہیں ہیں؟

  • 37:59

    موت جو ہمیں آنی تھی وہ بس پہلے آ چکی؟ اب ہمیں کوئی عذاب نہیں ہونا؟"

  • 37:60

    یقیناً یہی عظیم الشان کامیابی ہے

  • 37:61

    ایسی ہی کامیابی کے لیے عمل کرنے والوں کو عمل کرنا چاہیے

  • 37:62

    بولو، یہ ضیافت اچھی ہے یا زقوم کا درخت؟

  • 37:63

    ہم نے اُس درخت کو ظالموں کے لیے فتنہ بنا دیا ہے

  • 37:64

    وہ ایک درخت ہے جو جہنم کی تہ سے نکلتا ہے

  • 37:65

    اُس کے شگوفے ایسے ہیں جیسے شیطانوں کے سر

  • 37:66

    جہنم کے لوگ اُسے کھائیں گے اور اسی سے پیٹ بھریں گے

  • 37:67

    پھر اس پر پینے کے لیے کھولتا ہوا پانی ملے گا

  • 37:68

    اور اس کے بعد ان کی واپسی اُسی آتش دوزخ کی طرف ہو گی

  • 37:69

    یہ وہ لوگ ہیں جنہوں نے اپنے باپ دادا کو گمراہ پایا

  • 37:70

    اور انہی کے نقش قدم پر دوڑ چلے

  • 37:71

    حالانکہ ان سے پہلے بہت سے لوگ گمراہ ہو چکے تھے

  • 37:72

    اور اُن میں ہم نے تنبیہ کرنے والے رسول بھیجے تھے

  • 37:73

    اب دیکھ لو کہ اُن تنبیہ کیے جانے والوں کا کیا انجام ہوا

  • 37:74

    اس بد انجامی سے بس اللہ کے وہی بندے بچے ہیں جنہیں اس نے اپنے لیے خالص کر لیا ہے

  • 37:75

    ہم کو (اِس سے پہلے) نوحؑ نے پکارا تھا، تو دیکھو کہ ہم کیسے اچھے جواب دینے والے تھے

  • 37:76

    ہم نے اُس کو اور اس کے گھر والوں کو کرب عظیم سے بچا لیا

  • 37:77

    اور اسی کی نسل کو باقی رکھا

  • 37:78

    اور بعد کی نسلوں میں اس کی تعریف و توصیف چھوڑ دی

  • 37:79

    سلام ہے نوحؑ پر تمام دنیا والوں میں

  • 37:80

    ہم نیکی کرنے والوں کو ایسی ہی جزا دیا کرتے ہیں

  • 37:81

    در حقیقت وہ ہمارے مومن بندوں میں سے تھا

  • 37:82

    پھر دوسرے گروہ کو ہم نے غرق کر دیا

  • 37:83

    اور نوحؑ ہی کے طریقے پر چلنے والا ابراہیمؑ تھا

  • 37:84

    جب وہ اپنے رب کے حضور قلب سلیم لے کر آیا

  • 37:85

    جب اُس نے اپنے باپ اور اپنی قوم سے کہا "یہ کیا چیزیں ہیں جن کی تم عبادت کر رہے ہو؟

  • 37:86

    کیا اللہ کو چھوڑ کر جھوٹ گھڑے ہوئے معبود چاہتے ہو؟

  • 37:87

    آخر اللہ ربّ العالمین کے بارے میں تمہارا کیا گمان ہے؟"

  • 37:88

    پھر اس نے تاروں پر ایک نگاہ ڈالی

  • 37:89

    اور کہا میری طبیعت خراب ہے

  • 37:90

    چنانچہ وہ لوگ اسے چھوڑ کر چلے گئے

  • 37:91

    اُن کے پیچھے وہ چپکے سے اُن کے معبودوں کے مندر میں گھس گیا اور بولا " آپ لوگ کھاتے کیوں نہیں ہیں؟

  • 37:92

    کیا ہو گیا، آپ لوگ بولتے بھی نہیں؟"

  • 37:93

    اس کے بعد وہ اُن پر پل پڑا اور سیدھے ہاتھ سے خوب ضربیں لگائیں

  • 37:94

    (واپس آ کر) وہ لوگ بھاگے بھاگے اس کے پاس آئے

  • 37:95

    اس نے کہا "کیا تم اپنی ہی تراشی ہوئی چیزوں کو پوجتے ہو؟

  • 37:96

    حالانکہ اللہ ہی نے تم کو بھی پیدا کیا ہے اور اُن چیزوں کو بھی جنہیں تم بناتے ہو"

  • 37:97

    انہوں نے آپس میں کہا "اس کے لیے ایک الاؤ تیار کرو اور اسے دہکتی ہوئی آگ کے ڈھیر میں پھینک دو"

  • 37:98

    انہوں نے اس کے خلاف ایک کاروائی کرنی چاہی تھی، مگر ہم نے انہی کو نیچا دکھا دیا

  • 37:99

    ابراہیمؑ نے کہا "میں اپنے رب کی طرف جاتا ہوں، وہی میری رہنمائی کرے گا

  • 37:100

    اے پروردگار، مجھے ایک بیٹا عطا کر جو صالحوں میں سے ہو"

  • 37:101

    (اس دعا کے جواب میں) ہم نے اس کو ایک حلیم (بردبار) لڑکے کی بشارت دی

  • 37:102

    وہ لڑکا جب اس کے ساتھ دوڑ دھوپ کرنے کی عمر کو پہنچ گیا تو (ایک روز) ابراہیمؑ نے اس سے کہا، "بیٹا، میں خواب میں دیکھتا ہوں کہ میں تجھے ذبح کر رہا ہوں، اب تو بتا، تیرا کیا خیال ہے؟" اُس نے کہا، "ابا جان، جو کچھ آپ کو حکم دیا جا رہا ہے اسے کر ڈالیے، آپ انشاءاللہ مجھے صابروں میں سے پائیں گے"

  • 37:103

    آخر کو جب اِن دونوں نے سر تسلیم خم کر دیا اور ابراہیمؑ نے بیٹے کو ماتھے کے بل گرا دیا

  • 37:104

    اور ہم نے ندا دی کہ "اے ابراہیمؑ

  • 37:105

    تو نے خواب سچ کر دکھایا ہم نیکی کرنے والوں کو ایسی ہی جزا دیتے ہیں

  • 37:106

    یقیناً یہ ایک کھلی آزمائش تھی"

  • 37:107

    اور ہم نے ایک بڑی قربانی فدیے میں دے کر اس بچے کو چھڑا لیا

  • 37:108

    اور اس کی تعریف و توصیف ہمیشہ کے لیے بعد کی نسلوں میں چھوڑ دی

  • 37:109

    سلام ہے ابراہیمؑ پر

  • 37:110

    ہم نیکی کرنے والوں کو ایسی ہی جزا دیتے ہیں

  • 37:111

    یقیناً وہ ہمارے مومن بندوں میں سے تھا

  • 37:112

    اور ہم نے اسے اسحاقؑ کی بشارت دی، ایک نبی صالحین میں سے

  • 37:113

    اور اسے اور اسحاقؑ کو برکت دی اب ان دونوں کی ذریّت میں سے کوئی محسن ہے اور کوئی اپنے نفس پر صریح ظلم کرنے والا ہے

  • 37:114

    اور ہم نے موسیٰؑ و ہارونؑ پر احسان کیا

  • 37:115

    اُن کو اور ان کی قوم کو کرب عظیم سے نجات دی

  • 37:116

    اُنہیں نصرت بخشی جس کی وجہ سے وہی غالب رہے

  • 37:117

    ان کو نہایت واضح کتاب عطا کی

  • 37:118

    انہیں راہ راست دکھائی

  • 37:119

    اور بعد کی نسلوں میں ان کا ذکر خیر باقی رکھا

  • 37:120

    سلام ہے موسیٰؑ اور ہارونؑ پر

  • 37:121

    ہم نیکی کرنے والوں کو ایسی ہی جزا دیتے ہیں

  • 37:122

    در حقیقت وہ ہمارے مومن بندوں میں سے تھے

  • 37:123

    اور الیاسؑ بھی یقیناً مرسلین میں سے تھا

  • 37:124

    یاد کرو جب اس نے اپنی قوم سے کہا تھا کہ "تم لوگ ڈرتے نہیں ہو؟

  • 37:125

    کیا تم بعل کو پکارتے ہو اور احسن الخالقین کو چھوڑ دیتے ہو

  • 37:126

    اُس اللہ کو جو تمہارا اور تمہارے اگلے پچھلے آبا و اجداد کا رب ہے؟"

  • 37:127

    مگر انہوں نے اسے جھٹلا دیا، سو اب یقیناً وہ سزا کے لیے پیش کیے جانے والے ہیں

  • 37:128

    بجز اُن بندگان خدا کے جن کو خالص کر لیا گیا تھا

  • 37:129

    اور الیاسؑ کا ذکر خیر ہم نے بعد کی نسلوں میں باقی رکھا

  • 37:130

    سلام ہے الیاسؑ پر

  • 37:131

    ہم نیکی کرنے والوں کو ایسی ہی جزا دیتے ہیں

  • 37:132

    واقعی وہ ہمارے مومن بندوں میں سے تھا

  • 37:133

    اور لوطؑ بھی انہی لوگوں میں سے تھا جو رسول بنا کر بھیجے گئے ہیں

  • 37:134

    یاد کرو جب ہم نے اس کو اور اس کے سب گھر والوں کو نجات دی

  • 37:135

    سوائے ایک بڑھیا کے جو پیچھے رہ جانے والوں میں سے تھی

  • 37:136

    پھر باقی سب کو تہس نہس کر دیا

  • 37:137

    آج تم شب و روز اُن کے اجڑے دیار پر سے گزرتے ہو

  • 37:138

    کیا تم کو عقل نہیں آتی؟

  • 37:139

    اور یقیناً یونسؑ بھی رسولوں میں سے تھا

  • 37:140

    یاد کرو جب وہ ایک بھری کشتی کی طرف بھاگ نکلا

  • 37:141

    پھر قرعہ اندازی میں شریک ہوا اور اس میں مات کھائی

  • 37:142

    آخرکار مچھلی نے اسے نگل لیا اور وہ ملامت زدہ تھا

  • 37:143

    اب اگر وہ تسبیح کرنے والوں میں سے نہ ہوتا تو

  • 37:144

    روز قیامت تک اسی مچھلی کے پیٹ میں رہتا

  • 37:145

    آخرکار ہم نے اسے بڑی سقیم حالت میں ایک چٹیل زمین پر پھینک دیا

  • 37:146

    اور اُس پر ایک بیل دار درخت اگا دیا

  • 37:147

    اس کے بعد ہم نے اُسے ایک لاکھ، یا اس سے زائد لوگوں کی طرف بھیجا

  • 37:148

    وہ ایمان لائے اور ہم نے ایک وقت خاص تک انہیں باقی رکھا

  • 37:149

    پھر ذرا اِن لوگوں سے پوچھو، کیا (اِن کے دل کو یہ بات لگتی ہے کہ) تمہارے رب کے لیے تو ہوں بیٹیاں اور ان کے لیے ہوں بیٹے!

  • 37:150

    کیا واقعی ہم نے ملائکہ کو عورتیں ہی بنا یا ہے اور یہ آنکھوں دیکھی بات کہہ رہے ہیں؟

  • 37:151

    خوب سن رکھو، دراصل یہ لوگ اپنی من گھڑت سے یہ بات کہتے ہیں

  • 37:152

    کہ اللہ اولاد رکھتا ہے، اور فی الواقع یہ جھوٹے ہیں

  • 37:153

    کیا اللہ نے بیٹوں کے بجائے بیٹیاں اپنے لیے پسند کر لیں؟

  • 37:154

    تمہیں کیا ہو گیا ہے، کیسے حکم لگا رہے ہو

  • 37:155

    کیا تمہیں ہوش نہیں آتا

  • 37:156

    یا پھر تمہارے پاس اپنی ان باتوں کے لیے کوئی صاف سند ہے

  • 37:157

    تو لاؤ اپنی وہ کتاب اگر تم سچے ہو

  • 37:158

    اِنہوں نے اللہ اور ملائکہ کے درمیان نسب کا رشتہ بنا رکھا ہے، حالانکہ ملائکہ خوب جانتے ہیں کہ یہ لوگ مجرم کی حیثیت سے پیش ہونے والے ہیں

  • 37:159

    (اور وہ کہتے ہیں کہ) "اللہ اُن صفات سے پاک ہے

  • 37:160

    جو اُس کے خالص بندوں کے سوا دوسرے لوگ اس کی طرف منسوب کرتے ہیں

  • 37:161

    پس تم اور تمہارے یہ معبود

  • 37:162

    اللہ سے کسی کو پھیر نہیں سکتے

  • 37:163

    مگر صرف اُس کو جو دوزخ کی بھڑکتی ہوئی آگ میں جھلسنے والا ہو

  • 37:164

    اور ہمارا حال تو یہ ہے کہ ہم میں سے ہر ایک کا ایک مقام مقرر ہے

  • 37:165

    اور ہم صف بستہ خدمت گار ہیں

  • 37:166

    اور تسبیح کرنے والے ہیں"

  • 37:167

    یہ لوگ پہلے تو کہا کرتے تھے

  • 37:168

    کہ کاش ہمارے پاس وہ "ذکر" ہوتا جو پچھلی قوموں کو ملا تھا

  • 37:169

    تو ہم اللہ کے چیدہ بندے ہوتے

  • 37:170

    مگر (جب وہ آ گیا) تو انہوں نے اس کا انکار کر دیا اب عنقریب اِنہیں (اِس روش کا نتیجہ) معلوم ہو جائے گا

  • 37:171

    اپنے بھیجے ہوئے بندوں سے ہم پہلے ہی وعدہ کر چکے ہیں

  • 37:172

    کہ یقیناً ان کی مدد کی جائے گی

  • 37:173

    اور ہمارا لشکر ہی غالب ہو کر رہے گا

  • 37:174

    پس اے نبیؐ، ذرا کچھ مدّت تک انہیں اِن کے حال پر چھوڑ دو

  • 37:175

    اور دیکھتے رہو، عنقریب یہ خود بھی دیکھ لیں گے

  • 37:176

    کیا یہ ہمارے عذاب کے لیے جلدی مچا رہے ہیں؟

  • 37:177

    جب وہ اِن کے صحن میں آ اترے گا تو وہ دن اُن لوگوں کے لیے بہت برا ہو گا جنہیں متنبہ کیا جا چکا ہے

  • 37:178

    بس ذرا اِنہیں کچھ مدت کے لیے چھوڑ دو

  • 37:179

    اور دیکھتے رہو، عنقریب یہ خود دیکھ لیں گے

  • 37:180

    پاک ہے تیرا رب، عزت کا مالک، اُن تمام باتوں سے جو یہ لوگ بنا رہے ہیں

  • 37:181

    اور سلام ہے مرسلین پر

  • 37:182

    اور ساری تعریف اللہ ربّ العالمین ہی کے لیے ہے

Paylaş
Tweet'le